21 Ramzan Noha 2020 - Ek Faqeer Deta Tha Sada (Ameer Hasan Aamir)

21 Ramzan Noha 2020  Ek Faqeer Deta Tha Sada Ameer Hasan Aamir

baba ko dafn kar ke jo aye hasnain dekha gali main rota hai koi ba shoro shain aye or uske pass kaha bhai kya hua roro k sar patakta tha aur karta tha yeh bain

Haye woh nahi Aaya Haye woh nahi Aaya

1.ik faqeer deta tha sada haye vo nhi aya teen din ka faqa ho gya haye vo nhi aya 2.jb andhera sar pe chhata tha vo hmare pass ata tha khana hum sabhi ghareebo ko apne hatho se khilata tha tha ajeeb bandaye khuda haye vo nhi 3.Kis tarah se ab jiynege hum Ashk rat din piyenge hum Uske hote fikr hi na thi Khayege o kya piyenge hum Jane vo kidhar chala gya

Ek Faqeer Deta Tha Sada

4.Kis taraf kaha pe jaun main Kis tarah use manau main Apne mohsino maseeha ko Dhoondh kar kahan se laun main Naam tak mujhe nahi pata .... 5.Vo hmara ghum gusaar tha Yadgare kirdigar tha bolta to phool jharte the khamushi main rob dar tha tha zami p mazhare khuda 6.Har taraf udasi chaee thi jane kaisa din ye laee thi Ajj subha asman se Ik sada ajeeb ayee thin dil dharhak raha h ab mira 7.sun ke us faqeer ke sukhan ro padhe husain or hasan kahte the ye sar ko peet kar uth gaye jaha se bul hasan haye vo hi baba tha mera haye vo...... 8.Koofe ki zameen hil gaee Sar pe uske tegh chal gaee mara aisa rozadar ko zindagi ki shamma bujh gaee asma.n zami pe gir padha 9.Kb talak ye ghm uthayega ro ke humko bhi rulayega jisko yad kar raha hai tu ab kbhi bhi vo na ayega Humne usko di bahut sada... 10.Be kasi aur aisi be kasi Lag raha hai Aamir ajj bhi chodah sadiya.n ho gaee magar Ainee rizvi us faqeer ki gunjti hai koofe main sada.... Haye vo nahi.....

Ek Faqeer Deta Tha Sada

Urdu Lyrics:-

ابا کو دفن کرکے جو آۓ حسنین دیکھا گلی میں روتا ہے کویئ بشورو شین آۓ اور اس کے پاس کہا بھایئ کیا ہؤا رو رو کے سر پٹکتا تھا اور کرتا تھا یہ بین اک فقیر دیتا تھا صدا ہاۓ وہ نہیں آیا۔۔۔۔۔۔ تین دن کا فاقہ ہو گیا ہاۓ وہ نہیں آیا۔۔۔۔۔۔ جب اندھیرا سر پہ چھاتا تھا وہ ہمارے پاس آتا تھا کھانا ہم سبھی فقیروں کو اپنے ہتھوں سے کھلاتا تھا تھا اجیب بندۂ خدا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہاۓ وہ نہیں آیا۔۔۔۔۔۔۔ وہ ہمارا غم گسار تھا یاد گار کردگار تھا بولتا تو پھول جھڑتے تھے خامشی میں رعب دار تھا تھا زمیں پہ مظہر خدا۔۔۔۔ کس طرف کہاں پہ جاؤں میں کس طرح اسے مناؤں میں اپنے محسن و مسیحا کو ڈھونڈھ کر کہاں سے لاؤں میں نام تک مجھے نہیں پتا۔۔۔۔۔ کسطرح سے اب جیےنگے ہم اشک رات دن پیے نگے ہم اسکے ہوتے فکر ہی نہ تھی کھانگے او کیا پینگے ہم جانے وہ کدھر چلا گیا۔۔۔۔۔۔ ہر طرف اداسی چھائی تھی جانے کیسا دن یہ لایئ تھی آج صبح آسمان سے اک صدا عجیب آیئ تھی دل دھڑک رہا ہے اب مرا ۔۔ سن کے اس کے غم بھرے سخن رو پڑے حسین اور حسن کہتے تھے یہ سر کو پیٹ کر اٹھ گۓ جھاں سے بوالحسن ہاے وہ ہی بابا تھا مرا۔۔۔۔ کوفے کی زمین ہل گئی سر پہ اکے تیغ چل گیئ مارا ایسے روزہ دار کو زندگی کی شمع بجھ گیئ آسماں زمیں پہ گر پڑا۔۔۔۔۔۔ کب تلک یہ غم اٹھایگا رو کے ہمکو بھی رلایگا جسکو یاد کر رہا ہے تو اب کبھی بھی وہ نہ آیگا ہمنے اس کو دی بہت صدا۔۔۔۔۔۔ بے کسی اور ایسی بے کسی لگ رہا ہے عامر آج بھی چودہ صدیاں ہو گیئں مگر عینی رضوی اس فقیر کی گونجتی ہے کوفے میں صدا۔۔۔۔۔۔ ہاے وہ نہیں آی



21 Ramzan Noha 2020 - Ek Faqeer Deta Tha Sada (Ameer Hasan Aamir)
21 Ramzan Noha 2020 - Ek Faqeer Deta Tha Sada (Ameer Hasan Aamir)
Previous
Next Post »